ساتھ منزل تھی مگر خوف و خطر ایسا تھا

0
9

ساتھ منزل تھی مگر خوف و خطر ایسا تھا

عمر بھر چلتے رہے لوگ سفر ایسا تھا

جب وہ آئے تو میں خوش بھی ہوا شرمندہ بھی

میری تقدیر تھی ایسی مرا گھر ایسا تھا

حفظ تھیں مجھ کو بھی چہروں کی کتابیں کیا کیا

دل شکستہ تھا مگر تیز نظر ایسا تھا

آگ اوڑھے تھا مگر بانٹ رہا تھا سایہ

دھوپ کے شہر میں اک تنہا شجر ایسا تھا

لوگ خود اپنے چراغوں کو بجھا کر سوئے

شہر میں تیز ہواؤں کا اثر ایسا تھا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here