سسکتی رت کو مہکتا گلاب کر دوں گا

0
3

سسکتی رت کو مہکتا گلاب کر دوں گا

میں اس بہار میں سب کا حساب کر دوں گا

میں انتظار میں ہوں تو کوئی سوال تو کر

یقین رکھ میں تجھے لا جواب کر دوں گا

ہزار پردوں میں خود کو چھپا کے بیٹھ مگر

تجھے کبھی نہ کبھی بے نقاب کر دوں گا

مجھے بھروسہ ہے اپنے لہو کے قطروں پر

میں نیزے نیزے کو شاخ گلاب کر دوں گا

مجھے یقین کہ محفل کی روشنی ہوں میں

اسے یہ خوف کہ محفل خراب کر دوں گا

مجھے گلاس کے اندر ہی قید رکھ ورنہ

میں سارے شہر کا پانی شراب کر دوں گا

مہاجنوں سے کہو تھوڑا انتظار کریں

شراب خانے سے آ کر حساب کر دوں گا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here