منیر نیازی

0
7

شام کے مسکن میں ویراں میکدے کا در کھلا

شہر پربت بحر و بر کو چھوڑتا جاتا ہوں میں

نیل فلک کے اسم میں نقش اسیر کے سبب

رنگوں کی وحشتوں کا تماشا تھی بام شام

رہتا ہے اک ہر اس سا قدموں کے ساتھ ساتھ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here