نواز شریف کا علاج پاکستان میں ممکن، سفارشات محکمہ داخلہ کو بھیج دی گئیں

0
29

سابق وزیر اعظم نواز شریف کا طبی معائنہ کرنے والے میڈیکل بورڈ کے سربراہ ڈاکٹر ایاز محمود کا کہنا ہے کہ نواز شریف کا علاج پاکستان میں ممکن ہے۔

لاہور میں سروسز ہسپتال کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے میڈیکل بورڈ کے سربراہ ڈاکٹر ایاز محمود کا کہنا تھا کہ نواز شریف کا تین دن سے مکمل تفصیلی معائنہ کیا گیا ہے۔تفصیلی معائنے کے لیئے محتلف طبی شعبوں کے ماہرین پر مشتمل بورڈ تشکیل دیا گیا تھا۔ بورڈ میں شعبہ میڈیسن، اینڈوکرینولوجی، چیسٹ سرجری اور ریڈیولوجی سے تعلق رکھنے والے ماہرین شامل تھے۔

ڈاکٹر ایاز محمود نے بتایا کہ خیال یہ تھا کہ مختلف بیماریوں میں مبتلا نواز شریف کے تفصیلی طبی معائنے کے ساتھ تفصیلی ٹیسٹس بھی کئے جائیں تاکہ حقائق سامنے آ سکیں۔تفصیلی ٹیسٹس میں نواز شریف کا خون، ہارمونز، دل، سی ٹی اسکین اور پیٹ کا الٹراساؤنڈ بھی کیا گیا۔سارے ٹیسٹس مکمل ہوجانے کے بعد ٹیسٹ رپورٹس کو یکجا کر کے دوبارہ طبی معائنہ کیا گیا جس کے بعدمیڈیکل بورڈ کی جانب سے نواز شریف کی پہلے سے چلتی آ رہی دوائیوں میں معمولی ردو بدل کیا گیا۔

ڈاکڑ ایاز نے بتایا کہ نواز شریف کے تفصیلی طبی معائنے اور ٹیسٹس کے بعد رپورٹ کی روشنی میں سفارشات محکمہ داخلہ پنجاب کو بھجوادی گئی ہیں۔محکمہ داخلہ پنجاب جو فیصلہ کرے گاہم ویسے ہی عمل کریں گے۔

ایک سوال کے جواب میں ڈاکڑایاز کا کہنا تھا کہ نواز شریف کو بلڈ پریشر، شوگر، دل اور خون کی شریانوں کا مسئلہ ہے تاہم اخلاقی اور قانونی بنیادوں پر ٹیسٹ رپورٹ منظر عام پر نہیں لا سکتے۔محکمہ داخلہ پنجاب ہی رپورٹس کی روشنی میں سفارشات پر فیصلہ کرے گا جبکہ نواز شریف کا علاج پاکستان میں بلکل ممکن ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here