نواز شریف کی رہائی کے فیصلے کی ترسیل عدالتی وقت کے بعد کرنا مہنگا پڑ گیا

0
13

نواز شریف کی العزیزیہ کیس میں ضمانت کے فیصلے کی فوری ترصیل کرنے والے دو ملازمین کو معطل کردیا گیا۔

سپریم کورٹ نے گزشتہ روز سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف کو العزیزیہ ریفرنس کیس میں ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔ سپریم کورٹ کے اس فیصلے کو کوٹ لکھ پت جیل میں پہنچانا ضروری تھا، تاکہ جیل حکام نواز شریف کو عدالت عظمیٰ کے فیصلے کے پیش نظر رہاکرسکے۔

عدالتی اوقات کار سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ساڑھے 3بجے سہہ پہر ختم ہوگئے تھے۔ سپریم کورٹ کے نائب صدر قاصد علی اور سپریم کورٹ لاہور رجسٹری کے ڈسپیچ رائڈر شہزاد نے عدالتی وقت ختم ہونے کے باوجود فیصلے کی ترسیل کی، جس پر دونوں ملازمین کو سپریم کورٹ نے معطل کردیا ہے۔

یاد رہے کہ مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف کی ضمانت کا فیصلہ رات 9بجے لاہور بھیجا گیا۔فیصلے کی فوری ترسیل سے نواز شریف رات پونے ایک بجے جیل سے رہا ہوگئے تھے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here