گولان کے علاقے پر اسرائیل نے ناجائز قبضہ کر رکھا ہے، سعودی عرب

0
13

امریکا کی جانب سے گولان کے پہاڑی علاقے کو اسرائیل کے حق میں تسلیم کرنے کے اقدام پرسعودی عرب نے شدید مذمت کردی۔

سعودی حکومت نے بیان جاری کیا جس کے مطابق امریکا کے گولان پہاڑی کے علاقے پر اسرائیلی قبضے کو آئینی تسلیم کرنے کے فیصلے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اس فیصلے کو خطے کے امن کے لیے خطرناک قرار دیا جبکہ امریکا پر واضح کیا کہ گولان کا پہاڑی علاقہ ایک عرب علاقہ ہے جس پر اسرائیل نے ناجائز قبضہ کر رکھا ہے اور قبضہ ملکیت نہیں بن جاتا ہے، مستقبل میں بھی یہ علاقہ عرب کا حصہ رہے گا۔ امریکی صدر کو اپنے متنازعہ فیصلے کو واپس لیکر خطے میں امن کے خطرے کو ٹال دینا چاہیئے۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل برطانیہ، فرانس، روس اور چین نے امریکی فیصلے کے برخلاف گولان کے پہاڑی علاقوں کو بدستور مقبوضہ علاقہ تسلیم کرنے کا اعلان کرکے فلسطین، شام، ترکی اور سعودی عرب کے موقف کی تائید کردی ہے۔ ترکی اور شام نے بھی امریکی فیصلے کو عالمی قوانین کے منافی قرار دیا تھا۔

یاد رہے کہ متنازع فیصلوں کے لیے عالمی شہرت رکھنے والے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گولان کے مقبوضہ پہاڑی علاقے کو اسرائيلی سرزمين تسليم کرنے کا اعلان کیا تھا جس پر عالمی سطح پر مذمت کی گئی ہے۔ شام کے اس علاقے پر 1967 میں 6 روزہ جنگ کے بعد اسرائیل قابض ہوگیا تھا اور تاحال اس علاقے کو مقبوضہ علاقہ تسلیم کیا جاتا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here