ہر اک مقام سے آگے گزر گیا مہ نو

0
9

ہر اک مقام سے آگے گزر گیا مہ نو

کمال کس کو میسر ہوا ہے بے تگ و دو

نفس کے زور سے وہ غنچہ وا ہوا بھی تو کیا

جسے نصیب نہیں آفتاب کا پرتو

نگاہ پاک ہے تیری تو پاک ہے دل بھی

کہ دل کو حق نے کیا ہے نگاہ کا پیرو

پنپ سکا نہ خیاباں میں لالۂ دل سوز

کہ سازگار نہیں یہ جہان گندم و جو

رہے نہ ایبکؔ و غوریؔ کے معرکے باقی

ہمیشہ تازہ و شیریں ہے نغمۂ خسروؔ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here