ہم بھی سسٹم کو منجمد کر سکتے ہیں مگر اداروں کا نقصان نہیں چاہتے،خواجہ آصف

0
14

مسلم لیگ ن کے سینیئر رہنما خواجہ آصف نے کہا ہے کہ ہم بھی سسٹم کو منجمد کر سکتے ہیں مگر اداروں کا نقصان نہیں چاہتے۔

سینیئر رہنما مسلم لیگ ن خواجہ محمد آصف نے سیالکوٹ میں اپنی رہائش گاہ پر پریس کانفرنس کی۔صحافیوں سے گفتگو میں خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ ڈاکڑوں کی رپورٹ کے مطابق میاں صاحب کو دل کا مرض لاحق ہے۔نواز شریف کی صحت سے متعلق تائثر دیا جا رہا ہے کہ شاید ہم کوئی رعایت چاہتے ہیں۔حکومت نواز شریف کی بیماری کو ایشو بنا کر سیاسی فائدہ اٹھا نا چاہتی ہے۔حکومت کو کسی دشمن کی ضرورت نہیں حکومت میں بیٹھے لوگ اپنی ساکھ خراب کر رہے ہیں۔

نواز شریف کی بیماری سے متعلق مزید خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ حکومت میڈیکل بورڈ کی رپورٹ پر عملدرآمد یقینی بنائے اور نواز شریف کو دل کے ہسپتال منتقل کیا جائے۔6مہینے کے دوران وزیر اعظم عوام کے لیئے کوئی سہولت فراہم نہیں کرسکی۔وزیر اعظم کی کل کی گفتگو سے ان کی جھنجھلاہٹ نظر آرہی ہے۔

سابق وزیر دفاع خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم سمیت وزراء پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین شہباز شریف کو ہٹانے کی باتیں کر رہے ہیں۔اگر شہباز شریف کو چیئرمین پی اے سی سے ہٹایا گیا تو حا لات خراب ہوجائیں گے۔ہم بھی سسٹم کو منجمد کر سکتے ہیں مگر اداروں کا نقصان نہیں چاہتے۔

خواجہ آصف نے وزیر اعظم پر تنقیدکرتے ہوئے کہا کہ22سال عمران خان نے جو باتیں کی کیا ایک پر بھی عمل ہوا۔آج وہ یہ سب سوچ کے شرمندہ ہوتے ہونگے۔ عمران خان نے آئی ایم ایف کے پاس جانے پر خودکشی کا اعلان کیا تھا۔پہلی بار کوئی وزیر اعظم خود آئی ایم ایف سے بھیک مانگ رہا ہے۔عمران خان اور وزراء نے جو ماحول بنا دیا ہے اس سے بیورو کریسی کام کرنا چھوڑ دے گی۔اس وقت سسٹم کو حکمرانوں سے خطرہ ہے۔عمران خان ٹینشن کا شکار ہیں۔انہوں نے 6ماہ میں اپنے ارشادات کی نفی کے علاوہ کچھ نہیں کیا۔

خواجہ آصف نے مطالبہ کیا کہ نواز شریف کو فوری پنجاب کاردیالوجی داخل کروایا جائے۔اگر پرسوں نواز شریف کی ضمانت ہوگئی تو بیرون ملک علاج کروانے کا سوچیں گے۔حکمرانوں نے 6ماہ کے دوران 1400ارب کے نوٹ چھاپے۔حکومتی پالیسیوں سے خدشہ ہے کہ ہمارے دیرینہ دوست ممالک ناراض نا ہوجائیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here